April 24, 2024

قرآن کریم > البقرة >Surah 2 Ayat 1

الم

’’ا ۔ ل ۔ م۔‘‘

یہ حروفِ مقطعات ّہیں جن کے بارے میں یہ جان لیجیے کہ ان کے حقیقی‘ حتمی اور یقینی مفہوم کو کوئی نہیں جانتا سوائے اللہ اور اس کے رسول کے۔ یہ ایک راز ہے اللہ اور اس کے رسول کے مابین۔ حروفِ مقطعات کے بارے میں اگرچہ بہت سی آراء ظاہر کی گئی ہیں‘ لیکن ان میں سے کوئی شے رسول اللہ سے منقول نہیں ہے۔ البتہ یہ بات ثابت ہے کہ اس طرح کے حروفِ مقطعات کا کلام میں استعمال عرب میں معروف تھا‘ اس لیے کسی نے ان پر اعتراض نہیں کیا۔ قرآن مجید کی 114 میں سے 29 سورتیں ایسی ہیں جن کا آغاز حروفِ مقطعات سے ہوا ہے۔ سوره  قٓ ‘ سورۃ القلم اور سوره صٓ کے آغاز میں ایک ایک حرف ہے۔ حٰمٓ ‘ طٰہٰ  اور  یٰسٓ دو دو حرف ہیں۔ الٓـمّٓ اور الٓــرٰ تین تین حروف ہیں جو کئی سورتوں کے آغاز میں آئے ہیں۔ الٓـمّٓـصٓ اور الٓــمّٓــرٰ چار چار حروف ہیں۔ حروفِ مقطعات میں زیادہ سے زیادہ پانچ حروف یکجا آتے ہیں ۔ چنانچہ کٓـھٰـیٰـعٓــصٓ سورئہ مریم کے آغاز میں اور حٰمٓ عٓـسٓـقٓ  سورۃ الشوریٰ کے آغاز میں آئے ہیں۔ ان کے بارے میں اس وقت مجھے اس سے زائد کچھ عرض نہیں کرنا ہے۔ اپنے مفصل ّدرسِ قرآن میں مَیں نے ان پر تفصیل سے بحثیں کی ہیں۔

UP
X
<>