June 23, 2024

قرآن کریم > العنكبوت >sorah 29 ayat 6

وَمَن جَاهَدَ فَإِنَّمَا يُجَاهِدُ لِنَفْسِهِ إِنَّ اللَّهَ لَغَنِيٌّ عَنِ الْعَالَمِينَ

اورجو شخص بھی ہمارے راستے میں محنت اُٹھاتاہے، وہ اپنے ہی فائدے کیلئے محنت اُٹھاتا ہے۔ یقینا اﷲ تمام دُنیا جہان کے لوگوں سے بے نیاز ہے

آیت ۶     وَمَنْ جَاہَدَ فَاِنَّمَا یُجَاہِدُ لِنَفْسِہٖ اِنَّ اللّٰہَ لَغَنِیٌّ عَنِ الْعٰلَمِیْنَ : ’’اور جو کوئی بھی جہاد کرتا ہے تو وہ اپنے (ہی فائدے کے) لیے جہاد کرتا ہے۔ یقینا اللہ تمام جہانوں سے بے نیاز ہے۔‘‘

      دیکھو! تم میں سے جو کوئی اللہ کی راہ میں جدوجہد کر رہا ہے، اس کے لیے تکلیفیں اٹھا رہا ہے اور ایثار کر رہا ہے تو یہ سب کچھ وہ اپنے لیے کر رہا ہے، اس کا فائدہ بھی اسی کو ملنے والا ہے۔ وہ اپنے ان اعمال کا اللہ پر احسان نہ دھرے۔ اللہ کو ان چیزوں کی کوئی احتیاج نہیں ۔ وہ ان چیزوں سے بہت بلند اور بے نیاز ہے۔ سورۃ الحجرات میں اس مضمون کو اس طرح بیان فرمایا گیا ہے: (یَمُنُّوْنَ عَلَیْکَ اَنْ اَسْلَمُوْا قُلْ لَّا تَمُنُّوْا عَلَیَّ اِسْلَامَکُمْ بَلِ اللّٰہُ یَمُنُّ عَلَیْکُمْ اَنْ ہَدٰکُمْ لِلْاِیْمَانِ اِنْ کُنْتُمْ صٰدِقِیْنَ)’’ (اے نبی!) یہ لوگ آپ پر احسان جتاتے ہیں کہ وہ مسلمان ہو گئے۔ آپ کہہ دیجیے کہ تم لوگ اپنے اسلام کامجھ پر احسان مت دھرو، بلکہ یہ تو تم پر اللہ کا احسان ہے کہ اس نے تمہیں ایمان کی ہدایت دی، اگر تم (اپنے ایمان کے دعوے میں ) سچے ہو۔‘‘  ؎

 منت منہ کہ خدمت سلطاں ہمی کنی      منت شناس ازو کہ بخدمت بدا شتت!

      یعنی تم بادشاہ پر احسان مت دھرو کہ تم اس کی خدمت کر رہے ہو، بلکہ تم اس سلسلے میں بادشاہ کا احسان پہچانو کہ اس نے تمہیں اپنی خدمت کا موقع فراہم کیا ہے۔

      نوٹ کیجیے ان آیات کے مندرجات انسانی دل و دماغ کے احساسات و خیالات سے کس قدر مطابقت رکھتے ہیں ---- اب اگلی آیت میں پھر دلجوئی کا انداز ہے۔ گویا پہلے رکوع میں ترہیب کا رنگ بھی ہے اور ترغیب کا انداز بھی اور یہ دونوں مضامین پہلو بہ پہلو چل رہے ہیں ۔ آغاز سرزنش سے ہوا تھا، پھر دلجوئی فرمائی گئی، اس کے بعد پھر سرزنش اور اب پھر دلجوئی:

UP
X
<>