April 13, 2021

قرآن کریم > لقمان >sorah 31 ayat 3

هُدًى وَرَحْمَةً لِّلْمُحْسِنِينَ

جو نیک لوگوں کیلئے ہدایت اور رحمت بن کر آئی ہے

آیت ۳   ہُدًی وَّرَحْمَۃً لِّلْمُحْسِنِیْنَ: ’’ہدایت اور رحمت محسنین کے حق میں۔‘‘

      یعنی قرآن محسنین کے لیے سراسر ہدایت اور سراپا رحمت ہے۔ یاد رہے سورۃ البقرۃ کی آیت: ۲ میں اس کے مقابل (ہُدًی لِّلْمُتَّقِیْنَ) کے الفاظ ہیں کہ یہ ہدایت ہے اہل تقویٰ کے لیے۔ یہاں پرایک تو ہدایت کے ساتھ لفظ ’’رَحْمَۃ‘‘ کا اضافہ فرمایا گیا ہے۔ اس کے علاوہ یہاں کتاب سے استفادہ کے حوالے سے ’’متقین‘‘ کے بجائے ’’محسنین‘‘ کا ذکر ہے۔ محسنین دراصل متقین سے بلند تر درجے پر فائزوہ لوگ ہیں جن کا ایمان ترقی پاتے پاتے ’’احسان‘‘ کے درجے تک پہنچ جاتا ہے ---- ’’احسان‘‘ قرآن کی ایک اہم اصطلاح ہے۔ اس کی وضاحت قبل ازیں سورۃ المائدۃ کی اس آیت کے ضمن میں کی جا چکی ہے: (اِذَا مَا اتَّقَوْا وَّاٰمَنُوْا وَعَمِلُوا الصّٰلِحٰتِ ثُمَّ اتَّقَوْا وَّاٰمَنُوْا ثُمَّ اتَّقَوْا وَّاَحْسَنُوْا  وَاللّٰہُ یُحِبُّ الْمُحْسِنِیْن) ’’ جب تک وہ تقویٰ کی روش اختیار کیے رکھیں اور ایمان لائیں اور نیک عمل کریں اور پھر تقویٰ میں بڑھیں اور ایمان لائیں ، پھر اور تقویٰ میں بڑھیں اور پھر درجہ احسان پر فائز ہو جائیں ۔اور اللہ تعالیٰ محسنوں سے محبت کرتا ہے‘‘۔ یہ اس درجہ بندی کی طرف اشارہ ہے جس میں سب سے پہلے اسلام، اس کے بعد ایمان، اور پھر اس کے اوپر احسان کا درجہ ہے۔ اسلام، ایمان اور احسان کی یہ تین منازل ’’حدیث ِجبریل ؑ‘‘ میں بھی بیان ہوئی ہیں ۔ چنانچہ اللہ کے راستے کے مسافروں کی اعلیٰ ترین منزل ’’احسان‘‘ ہے۔

UP
X
<>