April 13, 2021

قرآن کریم > الأحقاف >sorah 46 ayat 8

أَمْ يَقُولُونَ افْتَرَاهُ قُلْ إِنِ افْتَرَيْتُهُ فَلا تَمْلِكُونَ لِي مِنَ اللَّهِ شَيْئًا هُوَ أَعْلَمُ بِمَا تُفِيضُونَ فِيهِ كَفَى بِهِ شَهِيدًا بَيْنِي وَبَيْنَكُمْ وَهُوَ الْغَفُورُ الرَّحِيمُ

کیا ان کا کہنا یہ ہے کہ اسے پیغمبر نے اپنی طرف سے گھڑ لیا ہے؟ کہہ دو کہ : ’’ اگر میں نے اسے اپنی طرف سے گھڑ لیا ہے تو تم مجھے اﷲ کی پکڑ سے ذرا بھی نہیں بچا سکو گے۔ جو باتیں تم بناتے ہو، وہ اُنہیں خوب جانتا ہے۔ میرے اور تمہارے درمیان گواہ بننے کیلئے وہ کافی ہے، اور وہی ہے جو بہت بخشنے والا، بڑا مہربان ہے۔‘‘

آیت ۸  اَمْ یَقُوْلُوْنَ افْتَرٰہُ: ’’کیا وہ کہتے ہیں کہ اس نے اس کو گھڑ لیا ہے؟

          کیا ان کا خیال ہے کہ محمد  نے قرآن کو خود تصنیف کیا ہے؟

          قُلْ اِنِ افْتَرَیْتُہٗ فَلَا تَمْلِکُوْنَ لِیْ مِنَ اللّٰہِ شَیْئًا: ’’(اے نبی!) ا ن سے کہیے کہ اگر میں نے اس کو گھڑ لیا ہے تو تم مجھے اللہ (کی پکڑ) سے ذرا بھی نہیں بچا سکتے۔

          سورۃالحاقۃ میں یہ مضمون اس طرح بیان ہوا ہے: وَلَوْ تَقَوَّلَ عَلَیْنَا بَعْضَ الْاَقَاوِیْلِr لَاَخَذْنَا مِنْہُ بِالْیَمِیْنِ  ثُمَّ لَقَطَعْنَا مِنْہُ الْوَتِیْنَ: کہ اگر بالفرض محمد  کوئی چیز گھڑ کر ہماری طرف منسوب کر دیں تو ہم ان کا دایاں ہاتھ پکڑیں گے اور پھر ان کی رگِ جاں کو کاٹ دیں گے۔ ظاہر ہے اس اسلوب میں جو غصہ ہے وہ ان لوگوں پر ہے جو حضور پر ایسا الزام لگانے کی جسارت کرتے تھے ۔

          ہُوَ اَعْلَمُ بِمَا تُفِیْضُوْنَ فِیْہِ: ’’وہ خوب جانتا ہے جن باتوں میں تم لگے ہوئے ہو۔

          اللہ تعالیٰ تمہاری یہ گفتگو بھی سن رہا ہے اور وہ تمہارے دلوں میں چھپے ہوئے خیالات سے بھی آگاہ ہے۔

          کَفٰی بِہٖ شَہِیْدًا بَیْنِیْ وَبَیْنَکُمْ وَہُوَ الْغَفُوْرُ الرَّحِیْمُ: ’’وہ کافی ہے بطور گواہ میرے اور تمہارے مابین‘ اور وہ خوب بخشنے والا ‘ بہت رحم فرمانے والاہے۔

          اللہ تعالیٰ نے میرے پاس وحی بھیجی ہے اور وہ خوب جانتا ہے کہ میں اس کا رسول ہوں ۔

UP
X
<>