May 24, 2024

قرآن کریم > الـمنافقون >sorah 63 ayat 7

هُمُ الَّذِيْنَ يَقُوْلُوْنَ لَا تُنْفِقُوْا عَلٰي مَنْ عِنْدَ رَسُوْلِ اللّٰهِ حَتّٰى يَنْفَضُّوْا ۭ وَلِلّٰهِ خَزَائِنُ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضِ وَلٰكِنَّ الْمُنٰفِقِيْنَ لَا يَفْقَهُوْنَ

یہی تو ہیں جو کہتے ہیں کہ جو لوگ رسول اﷲ کے پاس ہیں اُن پر کچھ خرچ نہ کرو، یہاں تک کہ یہ خود ہی منتشر ہوجائیں گے، حالانکہ آسمانوں اور زمین کے تمام خزانے اﷲ ہی کے ہیں ، لیکن منافق لوگ سمجھتے نہیں ہیں

آيت 7:  هُمُ الَّذِينَ يَقُولُونَ لَا تُنْفِقُوا عَلَى مَنْ عِنْدَ رَسُولِ اللَّهِ حَتَّى يَنْفَضُّوا:  «يهى هيں وه لوگ جو كهتے هيں كه مت خرچ كرو ان پر جو الله كے رسول (صلى الله عليه وسلم) كے گرد جمع هو گئے هيں، يهاں تك كه يه منتشر هو جائيں».

منافقين سمجھتے تھے كه اگر اهلِ مدينه مهاجر مسلمانوں پر خرچ كرنا بند كر ديں گے تو چند هى دنوں ميں يه سارى بھيڑ چھٹ جائے گى. يهى بات عبد الله بن ابى نے متذكره بالا جھگڑے كے موقع پر انصارِ مدينه سے كهى تھى.

وَلِلَّهِ خَزَائِنُ السَّمَاوَاتِ وَالْأَرْضِ وَلَكِنَّ الْمُنَافِقِينَ لَا يَفْقَهُونَ:  «حالانكه آسمانوں اور زمين كے خزانے تو الله هى كے هيں، ليكن منافقين اس حقيقت كا فهم نهيں ركھتے».

يهاں آسمانوں اور زمين سے مراد پورى كائنات هے.

UP
X
<>